Tuesday, April 16, 2024
Advertisment
HomeIslamic KnowledgeNew IMAM kay Peechay Surah-e-FATEHA ka Mas'alah ??? Ahl-e-Hadith Vs Hanafi...

New IMAM kay Peechay Surah-e-FATEHA ka Mas’alah ??? Ahl-e-Hadith Vs Hanafi ??? Engineer Muhammad Ali

- Advertisement -
- Advertisement -

New IMAM kay Peechay Surah-e-FATEHA ka Mas’alah ??? Ahl-e-Hadith Vs Hanafi ??? Engineer Muhammad Ali


A Critical Video Clip from 077-Public Q & A Session & Meeting of SUNDAY with Engineer Muhammad Ali Mirza Bhai (15-Jan-2023). Link of Complete Session : Ref. No. 1 : Complete NAMAZ-e-Muhammadi ﷺ , Witer, Janaza & Eid ka Practical (From Sahih BUKHARI & Sahih MUSLIM) : Ref. No. 2 : 70-b-Mas’alah: RAFA-ul-YADAIN say Motalliq FIRQAWARANA NAZRIYAAT ka TAHQEEQI Jaizah (8-ILMI Points) : #Islam #Namaz #EngineerMuhammadAliMirza

- Advertisement -
RELATED ARTICLES

28 COMMENTS

  1. Abu daood 822 ya 823 my b yhi hy
    نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس شخص کی نماز نہیں جس نے سورۃ فاتحہ اور کوئی اور سورت نہیں پڑھی ۱؎ ۔ سفیان کہتے ہیں: یہ اس شخص کے لیے ہے جو تنہا نماز پڑھے .. isy b st bta dy

  2. احمد بن حنبل تو وہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کے فرمان ”سورۃ فاتحہ کے بغیر نماز نہیں ہوتی“ کا مطلب یہ ہے کہ جب وہ اکیلے نماز پڑھ رہا ہو تب سورۃ فاتحہ کے بغیر نماز نہیں ہو گی۔ انہوں نے جابر بن عبداللہ رضی الله عنہما کی حدیث سے یہ استدلال کیا ہے جس میں ہے کہ ”جس نے کوئی رکعت پڑھی اور اس میں سورۃ فاتحہ نہیں پڑھی تو اس کی نماز نہیں ہوئی سوائے اس کے کہ وہ امام کے پیچھے ہو ۱؎“۔ احمد بن حنبل کہتے ہیں کہ یہ نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کے صحابہ میں ایک شخص ہیں اور انہوں نے نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم کے فرمان ”سورۃ فاتحہ کے بغیر نماز نہیں ہوتی“ کی تفسیر یہ کی ہے کہ یہ حکم اس شخص کے لیے ہے جو اکیلے پڑھ رہا ہو۔ ان سب کے باوجود احمد بن حنبل نے امام کے پیچھے سورۃ فاتحہ پڑھنے ہی کو پسند کیا ہے اور کہا ہے کہ آدمی سورۃ فاتحہ کو نہ چھوڑے اگرچہ امام کے پیچھے ہو۔. Isy b explain krdy phr

  3. Tera kya hoga kaliya
    !!!
    Lgta hai ALI BHAI Kai baar Sholay dekh chuke hein ..😅😅😅
    Khair
    Aapki sari baat or sari daleel bilkul sahi hai
    Hm v hanfi mazhab ko mante hein
    Lekin aapke is Qoul se Puri trah muttafiq hein

  4. زید بن ثابت اور حضرت جابر بن عبداللہ سے سوال کیا تو انہوں نے کہا کہ کسی نماز میں بھی امام کے پیچھے قراءت نہ کرو۔ 

    ابوحمزہ نے حضرت ابن عباس سے سوال کیا کہ کیا وہ امام کے پیچھے قراءت کریں، حضرت ابن عباس نے فرمایا نہیں۔ (شرح معانی الآثار ص 129، مطبوعہ مجتبائی پاکستان، لاہور )

    حافظ شہاب الدین احمد بن علی بن حجر عسقلانی متوفی 852 ھ لکھتے ہیں : حضرت ابن عمر، حضرت جابر، حضرت زید بن ثابت اور حضرت ابن مسعود سے امام کے پیچھے قراءت کی ممانعت ثابت ہے اور حضرت ابو سعید، حضرت عمر اور حضرت ابن عباس سے بھی روایات وارد ہیں۔ (الدرایہ مع الہدایہ الاولین ص 121، مطبوعہ مکتبہ شرکت علمیہ، ملتان) 

    جریر از سلیمان از قتادہ از حضرت عبداللہ بن مسعود روایت ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا جب امام قراءت کرے تو خاموش رہو۔ (امام مسلم نے کہا یہ حدیث صحیح ہے) ۔ (صحیح مسلم صلاۃ :63 (404) 880 ۔ مسند احمد ج 4، ص 396 ۔ سنن ابو داود رقم الحدیث : 972 ۔ 973)

    ان حادیث کے علاوہ ہم متعدد حوالہ جات کے ساتھ یہ بیان کرچکے ہیں کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا جس شخص کا امام ہو تو امام کی قراءت ہی اس کی قراءت ہے۔

    تبیان القرآن – سورۃ نمبر 7 الأعراف آیت نمبر 204

    زید بن ثابت اور حضرت جابر بن عبداللہ سے سوال کیا تو انہوں نے کہا کہ کسی نماز میں بھی امام کے پیچھے قراءت نہ کرو۔

    ابوحمزہ نے حضرت ابن عباس سے سوال کیا کہ کیا وہ امام کے پیچھے قراءت کریں، حضرت ابن عباس نے فرمایا نہیں۔ (شرح معانی الآثار ص 129، مطبوعہ مجتبائی پاکستان، لاہور )

    حافظ شہاب الدین احمد بن علی بن حجر عسقلانی متوفی 852 ھ لکھتے ہیں : حضرت ابن عمر، حضرت جابر، حضرت زید بن ثابت اور حضرت ابن مسعود سے امام کے پیچھے قراءت کی ممانعت ثابت ہے اور حضرت ابو سعید، حضرت عمر اور حضرت ابن عباس سے بھی روایات وارد ہیں۔ (الدرایہ مع الہدایہ الاولین ص 121، مطبوعہ مکتبہ شرکت علمیہ، ملتان)

    جریر از سلیمان از قتادہ از حضرت عبداللہ بن مسعود روایت ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا جب امام قراءت کرے تو خاموش رہو۔ (امام مسلم نے کہا یہ حدیث صحیح ہے) ۔ (صحیح مسلم صلاۃ :63 (404) 880 ۔ مسند احمد ج 4، ص 396 ۔ سنن ابو داود رقم الحدیث : 972 ۔ 973)

    ان حادیث کے علاوہ ہم متعدد حوالہ جات کے ساتھ یہ بیان کرچکے ہیں کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا جس شخص کا امام ہو تو امام کی قراءت ہی اس کی قراءت ہے۔

    تبیان القرآن – سورۃ نمبر 7 الأعراف آیت نمبر 204

  5. انجینیئر طارق مسعود صاحب سے پہلے اپنے subscribers کا گھمنڈ کرتا تھا اب تو اُنکے fan کے بھی ان سے زیادہ subscriber ہیں 😅

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

- Advertisment -

Recent Comments